سانوں کیہہ

(عبیر ابوذری پنجابی کے ایک مشہور شاعر تھے۔ وہ شاعری میں نظیر اکبر آبادی کے مکتب فکر سے متاثر تھے۔ ان کے شاعری کے موضوعات میں سر فہرست عام آدمی اور اس کے مسائل ہیں۔ زیر نظر نظم اگرچہ 3 یا 4 دہائیاں پہلے لکھی گئی تھی لیکن دیکھا جائے تو آج کے حالات سے بالکل مطابقت رکھتی ہے۔ اس سے کم از کم یہ بات تو ثابت ہوتی ہے کہ بہت کچھ بدلنے کے باوجود عام آدمی کی حالت نہیں بدلی۔)
عیداں ہَووَن یا شب راتاں سانُوں کیہہ
چھَڈّو جی ایہہ گَلاّں بَاتاں سانُوں کیہہ

دَسَّو کاہدے نال منائیے عِیداں نُوں
کیہڑی خوشی چہ نغمے گائیے عِیداں نُوں
کِتھَّوں پَائیے پِئے کھائیے عِیداں نُوں
کاہدے اُتّے ختم دَوائیے عِیداں نُوں

چَاہڑن دیگاں بھَرن پراتاں سانُوں کیہہ
چھَڈّو جی ایہہ گَلاّں بَاتاں سانُوں کیہہ

باہر دیاں جے ایڈاں نیں تے وَڈیاں لئی
ملک دیاں‌ جے بھیڈاں نیں تے وَڈیاں لئی
پُٹھّیاں سِدّیاں کھیڈاں نیں تے وَڈیاں لئی
لیبر دیاں پریڈاں نیں تے وَڈیاں لئی

وَڈیاں لئی نیں رُو رعائتاں سانُوں کیہہ
چھَڈّو جی ایہہ گَلاّں بَاتاں سانُوں کیہہ

مَانن بنگلے باراں دریاں سانوں کیہہ
وَرتن چِیزاں کھَرّیاں کھَرّیاں سانوں کیہہ
پہنن پَٹ ہنڈاون زَرّیاں سانوں کیہہ
ڈیناں بَن بَن بیٹھن پَریاں سانوں کیہہ

بھَانویں بَاندر پَون بَناتاں سانوں کیہہ
چھَڈّو جی ایہہ گَلاّں بَاتاں سانُوں کیہہ

پھِردے کاراں‌ تَے امپورٹر مَوجَاں نال
چور سمگلر جھُوٹن موٹر مَوجَاں نال
کَرن اٹینڈ کلبّاں ہوٹر مَوجَاں نال
ڈِھڈل مُوٹُو گنجے ٹوٹر مَوجَاں نال

دِنّے دوپہرے مانن راتاں سانوں کیہہ
چھَڈّو جی ایہہ گَلاّں بَاتاں سانُوں کیہہ

گَلاّں بَاتاں نال عبیرا فیدہ کِی
وَگدے ہوئے ناسُور تے چِیرا فیدہ کِی
دَسّن نال سٹور ذخیرہ فیدہ کِی
اَنّھیاں اکھّاں وِچ ممیرہ فیدہ کی

مُردہ ہندیاں جَان حیاتاں سانوں کیہہ
چھَڈّو جی ایہہ گَلاّں بَاتاں سانُوں کیہہ
(بابا عبیر ابوذری)
Comments
6 Comments

6 تبصرے:

محمد وارث نے فرمایا ہے۔۔۔

لاجواب کلام ہے یہ واہ واہ۔

ایک بات یہ برادرم کہ آپ کا بلاگ اردو سیارہ پر ظاہر نہیں ہوتا، مجھے امید ہے کہ آپ نے شمولیت کی درخواست دے دی ہوگی وہاں پر!

جعفر نے فرمایا ہے۔۔۔

شکریہ۔۔۔
جی درخواست تو دے دی ہے اب دیکھیں کب باری آتی ہے؟؟؟‌ کوئی سفارش وغیرہ کی ضرورت تو نہیں پڑتی ۔۔۔ :grin:

محمد وارث نے فرمایا ہے۔۔۔

اردو سیارہ دو ماہ سے زائد عمر کے بلاگ شامل کرتا ہے، اگر دو ماہ ہو گئے ہیں‌ آپ کو لکھتے ہوئے تو پھر تو شامل ہو جانا چاہیئے :smile:

تانیہ رحمان نے فرمایا ہے۔۔۔

مٹی پاو سنوں کیہہ۔ یہ اپنے گونگے، چودھری شجاعت کہتے ہیں

جعفر نے فرمایا ہے۔۔۔

::وارث:: ابھی دو ماہ کا نہیں ہوا بلکہ ابھی تو ”چھلے“ میں ہے۔۔۔ :mrgreen:
::تانیہ:: :grin: :grin:

بلوُ نے فرمایا ہے۔۔۔

سوا مہنہ ہونے کا بعد بھی نہیں‌ آئے گا کم سے کم دو مہینے کا ہوگا تو کوئی بات بنے گی :eek:

تبصرہ کیجیے