آسماں اس دفعہ رحم نہیں کھائے گا شاید

آسماں اس دفعہ رحم نہیں کھائے گا شاید
کوئی مجھ کو بچانے نہیں آئے گا شاید

سورج نہیں نکلے گا اس رات کے بعد
پرندہ، صبح کا گیت نہیں گائے گا شاید

میرا مشورہ ہے تو چھوڑ دے مجھ کو
پھرتجھے کوئی ہاتھ نہیں لگائے گا شاید

توڑ دے آس، تجھے کیا فرق پڑتا ہے
اک کھنڈر، دلِ برباد میں بڑھ جائے گا شاید

موسم گل میں بھنورا اداس ہے!
طوفاں کوئی ہلاکت خیز آئے گا شاید

Comments
17 Comments

17 تبصرے:

شاہدہ اکرم نے فرمایا ہے۔۔۔

تھوڑی سی بحر سے ہٹی ہُوئ لگ رہی ہے ویسے کوشش اچھی ہے

تانیہ رحمان نے فرمایا ہے۔۔۔

اچھی کوشش ہے جاری رکھیں ۔ کبھی نا کبھی ٹھیک ہو ہی جائے گی

جاوید گوندل ۔ بآرسیلونا ، اسپین نے فرمایا ہے۔۔۔

۔ کبھی نا کبھی ٹھیک ہو ہی جائے گی ۔ کیا ٹھیک ہوجائے گی؟ یہ کوئی دال روٹی یا یا کچی کی تختی ہے جو ٹھیک ہوجائے گی۔ یہ تو ُ ُ وارد،، کی ُ ُواردات،، بس جب ہو گئی سو ہو گئی۔ :wink:

میرا مشورہ ہے تو چھوڑ دے مجھ کو
پھرتجھے کوئی ہاتھ نہیں لگائے گا شاید

یا

پھر تجھے کوئی منہ نہیں لگائے شاید

جعفر باھئی ایک بات کی سمجھ نہیں آئی ۔ یہ شاہد بھائی کون ہیں :sad:

افتخار اجمل بھوپال نے فرمایا ہے۔۔۔

بنیادی طور پر شاعری نام ہی تُک بندی کا ہے ۔ اس کی قدر و قیمت اس میں درخ حقائق سے بنتی ہے

جعفر نے فرمایا ہے۔۔۔

::شاہدہ:: صرف بحر سے نہیں، بحروبر سے ہٹی ہوئی ہے۔۔۔ :grin:
::تانیہ:: حسن ظن کا شکریہ۔۔۔۔ یہ تو ٹھیک ہوہی جائے گی۔۔۔ میں کبھی ٹھیک نہیں‌ ہونے والا۔۔۔ :wink:
:؛جاوید::‌ :grin: :grin: یہ بھی ٹھیک ہے شاید :wink:
شاہد بھائی، بٹ بھٹی والی فلم کے شاہد گھمن ہیں۔۔۔ :mrgreen:
::افتخار بھوپال::‌ جناب میں نے ایک دفعہ پہلے بھی لکھا تھاکہ میرا تو شاعری کا دعوی ہی نہیں۔۔۔ بس ایسی ہی دل پشوری ہے۔۔۔ :lol:

کامی نے فرمایا ہے۔۔۔

واہ کیا بات ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا بات ہے ؟
شکر ہت تانیہ کی طرح شاید کو شاہد نہیں‌لکھ دیا ویسے تھیک کیا ہے شاید یا شائید۔

کامی نے فرمایا ہے۔۔۔

یار سوری میرا کی بورڈ دغہ دے جاتا ہے مطلب دھوکا مطلب گولی

خورشیدآزاد نے فرمایا ہے۔۔۔

یہ شعر پاکستان کے نام۔

آسماں اس دفعہ رحم نہیں کھائے گا شاید
کوئی مجھ کو بچانے نہیں آئے گا شاید

جعفر صاحب خیال پسند آیا۔

شاہدہ اکرم نے فرمایا ہے۔۔۔

کیا میں آپ لوگوں کی اِملا کی غلطیوں کی درُستگی کر کے آپ لوگوں کی کلاس لے سکتی ہُوں

کامی نے فرمایا ہے۔۔۔

یس مس جی

ڈفرستان کا ڈفر نے فرمایا ہے۔۔۔

کامی صاحب نے اس شاعری کا ایک شاعرانہ جواب دیا ہے
انکے بلاگ پر ملاحظہ کریں

خورشیدآزاد نے فرمایا ہے۔۔۔

کامی کا جواب ۔

اس کا باپ اس دفعہ رحم نہیں کھائے گا شاہد
کوئی تجھ کو بچانے نہیں آئے گا شاہد

گھر سے نہیں نکلے گا اس دن کے بعد
کسی کو نظر نہیں آئے گا شاہد

میرا مشورہ ہے تو چھوڑ دے اس کو
پھر تجھے کوئی ہاتھ نہیں لگائے گا شاہد

ڈھونڈ لے اور تجھے کیا فرق پڑتا ہے
ایک معشوق دل برباد میں بڑھ جائے گا شاہد

موسم عشق میں بھونڈ اداس ہے!
طوفان کوئی بھونڈی خیز آئے گا شاہد

( شاعر معزرت )

جعفر کا ترکی بہ ترکی جواب

ابھی چھٹی کرکے تیری پھینٹی لگائے گا شاہد
پھر تو بندے کا پتر بن جائے گا شاہد
مجھے تو تجھ پر غصہ ہی بڑا ہے
تیرا غلط خیال ہے کہ اتر جائے گا شاہد
میری شاعری کا وڑم سڑلا کردیا
تو شاعروں سے بددعایا جائے گا شاہد
توا لگایا ہے میرا سرعام تونے
کوئی تیرا بھی نمبر لگائے گا شاہد
جتنی بیستی تونے کی ہے میری
مجھے آج کے ایف سی کا چکن کھلائے گا شاہد

اور اب ہم کامی کے جواب کے منتظرہیں۔ :grin: :grin:

کامران اصغر کامی نے فرمایا ہے۔۔۔

اگر جعفر بھائی اجازت دیں گے تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جعفر نے فرمایا ہے۔۔۔

::کامی:: تہاڈی میری تے گل مک گئی اے نا راتیں۔۔۔۔۔ :wink:
::خورشید::‌ پسندیدگی کا شکریہ۔۔۔۔ اور میرا توا لگنا مشہور کرنے کا بھی شکریہ :mrgreen:
::ڈفر:: ہاں‌جی۔۔ ۔کرلیا ملاحظہ۔۔۔
اب میرا جواب الجواب بھی ملاحظہ کرلیں
:grin:
::شاہدہ:: بالکل لے سکتی ہیں
لیکن آپ کی غلطیاں کون درست کرے گا
:shock:

عمر احمد بنگش نے فرمایا ہے۔۔۔

اے تے گل ہی بدل گئی آ :mrgreen:

جاوید گوندل ۔ بآرسیلونا ، اسپین نے فرمایا ہے۔۔۔

اُونہم ۔ ۔ ۔اونہہ سوچنا پڑے گا ۔ ۔ کون کس کی کلاس لے گا ۔ ۔

ہیں اور بھی دنیا میں ماشٹر جی بہت اچھّے
کہتے ہیں کہ جعفر کا ہے اندازِ کتاباں اور

(مرزا غالب کی روح سے معذرت کیساتھ)

جعفر نے فرمایا ہے۔۔۔

::عمر:: دیکھ لے یار۔۔۔ کیا حال کیا ہے میری معصوم، ناکتخدا شاعری کے ساتھ۔۔۔ :mrgreen:
::جاوید:: :lol: :lol:

تبصرہ کیجیے