بی سی جیلانی کی ڈائری کا ایک ورق

صبح جلدی اٹھنا پڑا۔ رات ناروے کے قومی دن کی پارٹی میں ناں ناں کرتے بھی پانچ چھ لگاگیاتھا۔ صبح سر درد کے مارے پھوڑا بنا ہوا تھا، اٹھتے ہی بلیک کافی سے دو اسپرین نگلنی پڑیں۔ دس بجے ہالیڈے ان میں "چائلڈ لیبر اور انسانی حقوق کی تقدیس" پر ایک سیمینار تھا۔ جس کے مہمان خصوصی کیچوؤں کے تحفظ کی وزارت پر نئے آنے والے وزیر محترم تھے۔ مجھے اپنی این جی او "آؤ سبق سکھائیں" کی نمائندگی کرنا تھی اور پیپر بھی پڑھنا تھا۔ دیو ہیکل امریکی قونصل جنرل اس تقریب کی صدارت کرنے والے تھے، لہاذا میرا وقت سے پہلے پہنچنا ازحد ضروری تھا!

فیکے کو ہزار دفعہ سمجھایا ہے کہ جوتے رات کو ہی پالش کرکے رکھا کرو، آٹھ سال کا پلا پلایا سانڈ بن چکا ہے لیکن کام کرتے ہوئے موت پڑتی ہے۔ جبکہ اس کی ماں روز آکر اس کی تنخواہ بڑھانے کا مطالبہ کرتی ہے۔ ان غریبوں نے بھی ناک میں دم کرکے رکھا ہوا ہے۔ ادھر بشیر بھی ہر روز گاڑی سٹارٹ کرنے سے پہلے دو ہزار ایڈوانس مانگنا نہیں بھولتا۔ اس کی ماں بیمار ہے تو اس میں میرا کیا قصور ہے؟ میں تو اسے تنخواہ وقت پر دیتا ہوں۔ میں نے کیا ساری دنیا کا ٹھیکا لیا ہوا ہے؟

آج گھر میں ایک نیا چہرہ دیکھ کر میں دل پکڑ کر رہ گیا۔ کل ماسی حنیفاں بیمار تھی اور چھٹی مانگ رہی تھی لیکن مسز جیلانی نے کہا کہ اگر چھٹی کی تو پھر پکی چھٹی کرادوں گی، شاید اسی لئے آج اس نے اپنی بیٹی کو کام پر بھیجا تھا۔ کیا مال ہے!! میں تو سوچ رہا ہوں کہ آئندہ حقوق نسواں والی واک میں اس کو "پھٹے پرانے" کپڑے پہنوا کر اس کی تصویر بنواؤں اور اس کا پوسٹر بنے گا تو بہہ جا بہہ جا ہو جائے گی۔ یہ لڑکی میرے بڑے بڑے پھنسے ہوئے کام نکلوا سکتی ہے۔ ماسی کو دس ہزار بھی دے دیا تو وہ خوش ہوجائے گی!

ڈھائی بجے سیمینار سے فارغ ہوکر گالف کلب گیا۔ کلب کے مینیجر نےفون کیا تھا کہ ایس اے فاروقی آئے ہوئے ہیں، پچھلے تین سیمینارز کے بل پھنسے ہوئے تھے۔ ایس اے فاروقی سے مل کر گزارش کی کہ حضور ۳۰ فیصد کافی سے زیادہ ہے، آدھا آپ کو دے دیں گے تو خود گنجی نہائے گی کیا اور نچوڑے گی کیا!

گرانٹ ملے بھی ایک مہینہ ہوگیاہے۔ پچھلی گرانٹ تو ساری ڈیفنس والے بنگلے کی انٹیرئیر ڈیکوریشن میں لگ گئی تھی۔ اب کیری لوگر بل سے میری بڑی امیدیں وابستہ ہیں۔سننے میں آیا ہے کہ یہ گرانٹ این جی اوز کے ذریعے خرچ ہوگی۔ بس وارے نیارے ہوجائیں گے۔ پتہ نہیں کون بے غیرت لوگ غیرت غیرت کا شور مچا کر ہمارا چھابہ الٹانے پر تلے ہوئے ہیں۔ ان پر اللہ کی مار ہو!

آج شام کو جلدی گھر واپس آگیا، مسز جیلانی ایک کاک ٹیل پارٹی پر جانے کی تیاری کررہی تھیں، انہوں نے مجھے ساتھ چلنے کے لئے نہیں کہا، میں بھی یہی چاہتا تھا۔

ماسی حنیفاں کی بیٹی ابھی واپس نہیں گئی تھی!!!!!

Comments
25 Comments

25 تبصرے:

دوست نے فرمایا ہے۔۔۔

حسب حال افسانہ ہے۔ پسند آیا۔

راشد کامران نے فرمایا ہے۔۔۔

بہترین۔۔ ایک صفحہ تو آپ نے ایسا دکھایا کہ پورے سال کی ڈائری سامنے آگئی۔ بہت ہی اعلی۔

arifkarim نے فرمایا ہے۔۔۔

سیاست کے کھیل سہانے۔ شیطان نے بچے پالے۔ :shock:

uncletom نے فرمایا ہے۔۔۔

لیکن ماسی حنیفاں کی بیٹی کا اس ساری سٹوری سے تعلق سمجھ نہیں آیا ،،، 10 ہزار ؟/ وہ کس لیے دے گا

جعفر نے فرمایا ہے۔۔۔

::دوست:: شکریہ جناب۔۔۔ :smile:
::راشد کامران:: دارا نے ایک دو دن پہلے تضاد پر لکھا تھا۔ میں نے سوچا تصویر کا دوسرا رخ بھی دکھا دیا جائے۔۔۔ پسند کرنے کا بہت بہت شکریہ۔۔۔ :smile:
::عارف کریم::‌ یہ سیاست نہیں‌سیاہ ست ہے۔۔۔ :evil:
::انکل ٹام:: انکل ، کدھر غائب ہیں‌جی آپ۔۔۔ بہت دن کے بعد چکر لگایا۔۔۔
مصنف کا کام لکھ دینا ہے، اس کی تشریح کرنا پڑھنے والوں کا کام ہے :lol:

راشد کامران نے فرمایا ہے۔۔۔

اردو بلاگنگ میں یہ بات بہت خوش آئند ہے کہ کم از کم ہر نقطہ نظر کی ترجمانی کرتے لوگ اب موجود ہیں جس سے ایک توازن کی صورتحال پیدا ہورہی ہے۔ بلکہ مجھے تو اب امید ہوچلی ہے کہ اگلے چند برسوں میں میعار میں بھی خاطر خواہ بہتری آئے گی بلکہ چند سالوں پہلے کے بلاگ اور اب کے بلاگ کا جائزہ لیں تو باہمی برداشت اور مخالف نقطہ نظر سننے اور پڑھنے کے حوالے سے بھی کافی بہتری کے آثار ہیں۔

افتخار اجمل بھوپال نے فرمایا ہے۔۔۔

لکھتے آپ خوب ہیں

جعفر نے فرمایا ہے۔۔۔

::راشد کامران:: بالکل درست کہا۔ اختلاف رائے بہت عمدہ چیز ہے اگر اسے ذاتی مخالفت نہ سمجھا جائے تو۔۔۔۔
::افتخار اجمل بھوپال:: آپکی محبت ہے۔۔۔ :smile:

خرم شہزاد خرم نے فرمایا ہے۔۔۔

واہ جعفر بھائی کیا بات ہے
جیلانی صاحب کی ڈائری کا ایک ورق یہ ہے تو پھر ڈائری کیا ہوگی

منیر عباسی نے فرمایا ہے۔۔۔

جعفر :: ایک تو انکل ٹام جیسے بچوں کا داخلہ یہاں بند کرو۔ خا مخا میں فضول سےسوال پوچھ کر تبصروں کا مزہ کِرکِرا کر دیتے ہیں، دوسرے ذرا یہ تو بتاؤ بی سی کس چیز کا مخفف ہے؟

مجھے شک تو ہو چلا ہے مگر احتیاطن پوچھ رہا ہوں۔ :mrgreen:

کنفیوز کامی نے فرمایا ہے۔۔۔

بہت ہی ادبی اور قلمی چھترول ہے۔ حسب حال باتیں ہیں ۔اتنی اچھی تحریر پر صرف دس تبصرے میں تو پہلے ہی کہتا ہوں کہ بلاگستان پر نیستی :sad: چھائی ہے۔

جعفر نے فرمایا ہے۔۔۔

::خرم شہزاد خرم:: شکریہ بھائیجان۔۔۔
::منیر عباسی:: بچوں کو بھی تو تعلیم دینی ہے ناں جی۔۔۔ ;-) سوال نہیں پوچھیں گے تو بڑے کیسے ہوں گے۔۔۔ :grin:
آپ ہیں ویسے بڑے چالاک۔۔۔ :mrgreen:
::کنفیوز کامی:: شکریہ شکریہ تھینک یو تھینک یو۔۔۔ :smile:

عمر احمد بنگش نے فرمایا ہے۔۔۔

ہی ہا :mrgreen:
شرم کرو ایک تو وہ اتنی محںت کر رہا ہے اور تم بھی ناں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ورقے نکال نکال ادھر پیش کر رہے ہو۔ ہے واقعی بی سی :mrgreen: اگر وہی والا ہے تو :oops:

عمر احمد بنگش نے فرمایا ہے۔۔۔

اور ہاں‌یار یہ اتنی اچھی تحآریر نہ لکھا کرو، ایک دم سے تیرے بلاگ پر اتنا رش ہو جاتا ہے کہ میں‌تین تین دن یہاں‌ پہنچ ہی نہیں‌پاتا :razz:
شباژ‌بھٹٰی والی پوسٹ‌کب آرہی ہے؟ :?:

جعفر نے فرمایا ہے۔۔۔

::عمربنگش:: شباژ بھٹی والی پوسٹ ذرا اور بے شرم ہوجاؤں پھر لکھوں گا۔۔۔ :mrgreen:
ہاں‌محنت تو واقعی بہت کرتے ہیں ایسے لوگ۔۔۔ بے چارے۔۔۔ مجھے ان پر بڑا ”ترس“ آتا ہے۔۔۔۔ دل کرتا ہے ان کی اتنی ”خدمت“ کروں کہ بس ۔۔۔ کچھ نہ پچھ۔۔۔
:evil:
نہیں یار رش نہیں تھا۔۔۔ بلاگ بند ہوجاتا ہے ۔۔۔ لگتا ہے اسے بھی کسی نے کہہ دیا ہے کہ لنچ کے بعد قیلولہ کرنا چاہئے۔۔ بس بند ہوجاتا ہے ایک بجے اور پھر ڈنر کے وقت ہی کھلتا ہے۔۔۔ :lol:

شاہدہ اکرم نے فرمایا ہے۔۔۔

جعفر ماشاءاللہ کیا زبردست تحریر ہے
لگتا ہی نہیں کہ ہنسا ہنسا کر دوہرا کرنے کا فن بھی اسی جعفر کے ہاتھ میں ہے بہُت میچیور تحریر ہے
وُہ کہتے ہیں نا کہ
بِھگو بِھگو کر لگانا
زبردست لگائ ہیں آپ نے
کیا حسبِ حال یا حالات ہے؟؟؟

uncletom نے فرمایا ہے۔۔۔

جعفر بھای مجھے وہم ہو گیا تھا کہ میں سب سے برا لکھتا ہوں ،، اسی لیے نہیں‌ آتا پھر سوچا چلو بستی ہی ہونی ہے نہ کوی گل نہیں آگے پیچھے کونسا کم ہوتی ہے ۔۔۔ ویسے اگر آپ مجھے بچا کہنے کی بجاے پینڈو کہہ دیں تو مجھے اتنی بستی محسوس نہ ہو :mrgreen:

جعفر نے فرمایا ہے۔۔۔

::آپی::اتانی تعریفیں :shock:
یقین کریں۔۔۔ یقین نہیں آرہا :o
::انکل ٹام:: ارے نہیں بھائی جان مجھے سے تو اچھا ہی لکھتے ہیں آپ۔۔۔ ;-)

غفران نے فرمایا ہے۔۔۔

کیا بات ہے جی کیا بات ہے۔ مزہ آ گیا پڑھ کے ۔ اب میں ذرا چائے بنا آوں مزا دوبالا کرنے کیلئے۔

جعفر نے فرمایا ہے۔۔۔

::غفران:: شکریہ ڈاکٹر صاحب۔۔۔ چائے صرف بنانے کا پروگرام ہے یا پئیں‌گے بھی۔۔۔ یا پھر یہ چائے بھی میری ترکیبوں کی طرح صرف دوسروں کے لئے ہے۔۔۔ :grin:

خرم نے فرمایا ہے۔۔۔

بہت اچھی تحریر۔ :smile:

جعفر نے فرمایا ہے۔۔۔

::خرم:: بہت بہت شکریہ۔۔۔ :smile:

ابن سعید نے فرمایا ہے۔۔۔

اڑتے اڑتے یہ ورق آج میری جانب بھی آ نکلا۔

اب اور کیا کہوں کہ اسے الٹ پلٹ کر دیکھ رہا ہوں کہ پچھلے صفحے پر یا کہیں کسی گوشے میں کچھ اور بھی لکھا مل جائے۔ خیر میں آس پاس نگاہ رکھوں گا شاید کوئی اور ورق۔۔۔

جعفر نے فرمایا ہے۔۔۔

::ابن سعید:: خوش آمدید :smile:
جیلانی "صاحب" کی پوری ڈائری ہی ہاتھ لگ گئی ہے میرے۔ لیکن جی اب میں‌ذرا ان کو بلیک میل کررہاہوں‌اس لئے اب کوئی اور ورق شاید شائع نہ کرسکوں۔۔۔ :grin:

آبرار قریشی نے فرمایا ہے۔۔۔

خوبصورت! عمدہ اور شاندار تحریر بس ایک کمی سی ہے کاش ڈائری ماسی حنیفاں کی بیٹی کے جانے تک کے واقعات کا احاطہ بھی کرتی :ڈ اعلیٰ جعفر بھائی

تبصرہ کیجیے