قیدی کی فریاد


یہ کیا او گیا اے؟
جسٹس چودری اے، ٹیرا اے۔ نوایشریف سے پیسے کھاتا اے۔ مجھے پھساتا اے۔  میں آیا اوں، عوام کی امیدیں جاگی ایں۔   میرے کاغژ ایں ، مسترد کردئیے ایں۔  میں اونسٹ اوں، میری ڈگنیٹی بھی اے۔ عوام کی اتنی کِی اے ۔ کسی کی جرات نئیں اے کہ اتنی کرسکے۔ خدمت اے،  کِی اے۔ کیا صلہ دیا اے؟  اندر کردیا اے۔  عوام اے، روتی اے۔ کہتی اے ، میرا دور اچھا تھا، امن تھا، چین تھا، موبائل تھے، بچیاں تھیں،  پھستی بھی تھیں، مزا  آتا تھا۔  اب بجلی نی اے، گیس نی اے، کچھ بھی نی اے۔  
فیش بک اے، دھوکہ اے۔ سب جھوٹے لو گ ایں۔ مجے اشکل دی اے۔ میں آیا اوں، خود نئیں آئے ایں۔ میں پھس گیا اوں۔ کیس ایں، کھل گئے ایں۔ تشریف اے، بند ہوگئی اے۔فون کیے ایں۔ کسی نے بات نئیں کی اے۔ احسان فراموش اے۔ کیانی اے۔ میں نے  بنایا اے۔ مجے ای گیڑا کرایا اے۔ زندگی اے، آرمی کو دی اے۔ میں کمانڈو اوں، مجے ڈر نی لگتا اے۔  بس کِرلی سے لگتا اے،  کنکھجورے سے بھی لگتا اے۔ باقی کسی سے نی لگتا اے۔
اٹک قلعہ اے۔ بہت گرم اے۔ گرمی  آتی اے ، تپ جاتا اے۔ سانپ ایں ، نکلتے ایں۔ سانپ سے ڈر نی لگتا اے۔ پینٹ گیلی ہوجاتی اے۔ عمر کا تقاضہ اے، ڈر،  نئیں اے۔ جیل اے، مزے ایں، آفیشر میس اے، بیٹ مین اے، بریک فاشٹ اے، بوتل بھی اے۔ طبلہ اے، بجاتاہوں ، مزا  آتا اے۔ ایمبیشی والے ایں، میرے یار ایں۔  ریمنڈ ڈیوس اے، معمولی آدمی اے، میں اوں ، پریژیڈنٹ اوں۔ میں نے نکلنا اے، چلے جانا اے۔  میرا کچھ پٹ نئیں سکتے ایں۔ خدمت کی اے۔ دل سے کی اے۔ ہر بات مانی اے، وہ بھی مانی اے جو نہیں کہی اے۔ مجے ڈر نی لگتا اے۔ امریکہ اے، میرے ساتھ اے۔ اللہ اے، وہ بھی میرے ساتھ اے۔ عوام اے، اس کا پتہ نی چلتا اے، فیش بک پر میرے ساتھ اے۔ سڑک پر کہتی اے، مشرف کو پھانسی دو۔ مشرف نے کیا کِیا اے؟
میڈیا اے، بکا ہوا اے۔ میں نے آزادی دی اے۔ میرا  ای بیڑہ غرق کیا اے۔  میرے کلوژ اپ دکھاتے ایں۔ گرمی اے، پسینہ آتا اے۔ گلط امپریشن جاتا اے۔  مجے پہلے بِھی ڈر نئیں لگتا تھا، اب بھی نئیں لگتا اے۔ لال ماسجد اے، دہشت گردی اے۔ میں نے ختم کی اے، مجھے  گالیاں دیں ایں۔ میں نے کیا کیِا اے؟  الیکشن ایں، میں نے جیتنے ایں۔ دہشت گردی اے، ختم کرنی اے۔ ماسجدوں میں دہشت گرد ہوتےایں، ان کو پکڑنا اے، مارنا اے، بمب مارنے ایں، گولیاں مارنی ایں۔ ڈرون ایں، گڈ ایں۔ میں نے اجاژت دی اے۔ ویڈیو گیم جیسا مژا آتا اے۔ بندے ایں ، مرتے ایں۔  سب نے مرنا اے۔ پہلے مرنا اے یا بعد میں مرنا اے۔ شور کرنے کی کیا ضرورت اے؟
وکیل ایں۔ چو ل ایں۔ نعرے ایں۔ لگاتے ایں۔ مشرف کُتا اے، کہتے ایں۔ میں کُتا نی اوں، وہ صدر اے۔ میں تو شیر اوں۔ جسٹس چودری اے۔کھوتا  اے۔
شیر اور کھوتے والا لطیفہ اے ۔ میں نے  نئیں سنا اے۔
ڈنر آگیا اے، بوتل بھی آگئی اے۔ ڈانس کا ارینجمنٹ نئیں اے۔ بیگم صاحبہ ایں۔ ناچتی ایں۔ اب اچھی نی لگتی ایں، جوانی تھی، مزا آتا تھا۔ پارٹی میں ڈانس ہوتا تھا۔ ترقی ملتی تھی۔ اب گئی اے۔ ناچی اے، سارے کیس کھل گئے ایں۔ ظلم اے۔ جوانی اے۔ بے وفا اے۔
میں نیک انسان اوں۔ کبھی گناہ نئیں کیا اے۔ حج کیے ایں، عمرے کیے ایں۔  نماژیں بھی پڑھی ایں۔ روژے بھی رکھے ایں۔ کارگل میں جہاد بھی کیا اے۔ مجھ سے اچھا کون مسلمان ہوسکتا اے؟
Comments
10 Comments

10 تبصرے:

Anonymous نے فرمایا ہے۔۔۔

واہ واہ ای اے،
زبردست لکھا ای اے۔۔
ائیڈیا کِنے دیا ای اے۔۔
کیپ اِٹ اَپ ای اے۔۔۔
آپس دی گال اے،
اے بندہ مینوں بڑا چنگا لگدا اے۔۔
ترس اندا اے۔۔۔
ہُن میرے پچھے نہ پے جانا ای اے۔۔۔

MAniFani نے فرمایا ہے۔۔۔

ہاہاہا۔ لالا خوب۔ تسی اپنا بدلہ لے لیا :ڈ

جاوید گوندل ۔ بآرسیلونا ، اسپین نے فرمایا ہے۔۔۔

دل کھول کر ہنسا ہوں۔ مگر سوچنے کی بات ہے اس قوم کے نصیب میں کس طرح کے جوکر لکھے گئے۔

اگر کوئی انہونی نہ ہوئی ۔۔انہونیاں جو اس ملک کے نصیب میں اجکل کچھ زیادہ ہی ہورہی ہیں ۔ تو یہ سیدھا جائے گا پھانسی کے گھاٹ پہ۔ انشاءاللہ
ظالم کتنا ہی طاقور کیوں نہ ہو ۔ آخر ایک دن اسے مکافات عمل سے واسطہ پڑتا ہے۔مگر جو اس کے دور میں اور اسکے لگائے این او آر نامی پودے سے براآمد ہونے والی زرداری حکومت یعنی اتنے سال پاکستان پیچھے چلا گیا ۔ ہزاروں لاکھوں داستانوں کو جنم دے گیا ۔ زندگیوں کو برباد اور قوم کو خوار کرگیا ۔۔ ان اتنے سالوں کا مداوا کیسے ہوگا؟ انگنت زندگیوں اور قوم کی بربادیوں کا کفارہ یہ قوم خدا جانے کب تک ادا کرے گی۔

آپ کی تحریر بہت شاندار ہے۔ اللہ تعالٰی سلامت رکھے۔

DuFFeR - ڈفر نے فرمایا ہے۔۔۔

لولززززززززز
مزیدار
جوتا اے
وہ بی کھایا اے
بڑا مزہ آیا اے
میری تو یہیں بس ہو گئی
تیری اتنی لمبی سٹنگ اپنے جانی کے ساتھ؟ :ڈ

افتخار اجمل بھوپال نے فرمایا ہے۔۔۔

کل عاصمہ جہانگیر اور احمد رضا قصوری بڑا زور دے کر کہہ رہے تھے کہ اعلٰی عدالتوں کے جج ڈکٹیٹر ہیں ۔ آئین اور قانون پر نہیں چلتے ۔ اپنی ذاتی پسند اور ناپسند پر چلتے ہیں ۔ وہ تو سارے پاکستان نے ٹی وی پر دیکھا ہو گا ۔ آپ کا بلاگ زیادہ سے زیادہ 1000 لوگ پڑھ لیں گے ۔ ویسے میری دِلی دعا ہے کہ انصاف ہو اور ایسا ہو کہ آئیندہ کوئی کج روی اختیار کرنے کی جراءت نہ کر سکے

منیر عباسی نے فرمایا ہے۔۔۔

واہ !! بہت عرصے بعد استاد کو اپنی اوریجنل فارم میں دیکھا۔

awaragardkidiary نے فرمایا ہے۔۔۔

ون ورڈ: سمپلی آسم! اور یہ والی لائن تو پوری پوسٹ کی جان ہے :ڈ
بیگم صاحبہ ایں۔ ناچتی ایں۔ اب اچھی نی لگتی ایں، جوانی تھی، مزا آتا تھا۔ پارٹی میں ڈانس ہوتا تھا۔ ترقی ملتی تھی۔ اب گئی اے۔ ناچی اے، سارے کیس کھل گئے ایں۔ ظلم اے۔ جوانی اے۔ بے وفا اے۔

Rai Azlan نے فرمایا ہے۔۔۔

جان کی امان پاوں تو عرض کروں۔۔۔ مزا نہیں آیا مرشد اس چ کی بے ادبی بھی ادب کا تقاضا ہے مزید بہتر ہو سکتی تھی۔

طالوت نے فرمایا ہے۔۔۔

چھا گئے او بادشاہو ، اگر اس کی آڈیو بھی ہو جاتی تو مزہ دوبالا ہو جاتا۔

محمد ریاض شاہد نے فرمایا ہے۔۔۔

مشرف کا نداز بیاں صرف آڈیو میں سجتا ہے ، تحریر میں آ کر پھیکا پڑ جاتا ہے

تبصرہ کیجیے