رینڈم نیس

تفصیل، تباہ کن ہوتی ہے۔
*******************************************************************
روحانیت کا سفر، محبت سے شروع ہوتا ہے۔
*******************************************************************
سادگی، قابل شرم اور لش پش، رواج بن جائے تو وہی حال ہوتا ہے، جو ہمارا ہے۔
*******************************************************************
سیاست کے علاوہ کوئی بات کرنے کو نہ ہو تو یہ کیسی بدنصیبی کی بات ہے۔
*******************************************************************
دنیا کے سامنے ذلیل ہونا اپنے آپ کے سامنے ذلیل ہونے سے بہتر ہے.
*******************************************************************
رب یا ہو محبوب، پہلی ترجیح بنائے بغیر نہیں ملتا۔
*******************************************************************
باس اور معشُوق کو کبھی جگت نہیں کرنی چاہیے۔
*******************************************************************
لفظ ، بے معنی ہوتے ہیں، مخاطب اور لہجہ ان کو معانی دیتے ہیں۔
*******************************************************************
باس اور محبوب نرم مزاج ہو تو ماتحت اور عاشق نکمے ہوجاتے ہیں۔
*******************************************************************
اپنے اندر کا جھاڑ جھنکاڑ سمیٹ کے، جالے اتارکے، سفیدی کرکے، اگر بتیاں لگاکے دھمال ڈالنا، محبت ہے۔
*******************************************************************
جب کوئی آپ کی ناراضگی کی پروا کرنا چھوڑے دے تو سمجھ جائیے کہ محبت ختم اور مجبوری شروع ہوگئی ہے۔ *ماخوذ*
*******************************************************************
پاکستانی قوم بھی وہ شہزادی ہے جو ہمیشہ کسی چنگڑ کے ساتھ پھس جاتی ہے.
*******************************************************************
جگجیت سنگھ سننے کا مطلب ہے کہ محبوب اور حکیم دونوں تک رسائی ناممکن ہوچکی ہے۔
*******************************************************************
شہوانیت باتوں میں نہیں، دماغ میں ہوتی ہے۔
*******************************************************************
خوشی کی ترسیل ہمیشہ غم کے وسیلے سے ہوتی ہے۔
*******************************************************************
خواہش، روح کو کانٹوں پر گھسیٹنا ہے۔
*******************************************************************
دو قومی نظریہ، دنیا میں انسان کے ساتھ ہی وجود میں آگیا تھا۔۔۔۔ ظالم قوم۔ مظلوم قوم۔
*******************************************************************
رب سے گلہ کرنا جائز ہے۔۔۔ گلہ، اپنوں سے ہی کیا جاتا ہے۔
*******************************************************************
سیلف میڈ، انسان نہیں رہتا، فرشتہ ہوجاتاہے یا شیطان۔
*******************************************************************
زن، زر اور زمین، مرد کا پھندہ ہیں۔
*******************************************************************
مجھے تو کبھی کبھی یہ لگتا ہے کہ پاکستان، مجید نظامی اور نوائے وقت نے بنایا تھا۔
*******************************************************************
قدر، نسبت کی ہوتی ہے، چیز کی نہیں۔
Comments
8 Comments

8 تبصرے:

faheem wali نے فرمایا ہے۔۔۔

Kisi zamaaney mein totay hua kerte the,aaj aapko unki yaad ghaliban buhut aa rahi hogi jo blog us andaaz me likha hy

وحید سلطان نے فرمایا ہے۔۔۔

ہاہاہاہا۔
نوائے وقت اور مجید نظامی۔
ٹُو دی پوائینٹ اقوال بائے جعفر حسین :)

ھاشم رضا نے فرمایا ہے۔۔۔

زبردست جناب

Muhammad Shakir Aziz نے فرمایا ہے۔۔۔

سبحان اللہ مرشد یہ مجید نظامی والی عین کن دے نیڑے تیڑے رکھی ہے۔

Anonymous نے فرمایا ہے۔۔۔

واہ زبردست..لیکن میرا خیال ہے کہ ابهی بہت کچه رہ گیا ہے اس کلیکشن میں... اگلے مجموعے دا انتظار راسی....

Waseem Rana نے فرمایا ہے۔۔۔

واہ زبردست۔۔۔۔۔

Rai Muhammad Azlan Shahid نے فرمایا ہے۔۔۔

Nawaay Waqt wali baat kya khoob kahi... mujhy bhi aksar yehi lagta hay aor aisa aksar mujhy Faiz ke hawaly se bhi lagta hay aor Bhutto ke bhi.

Naseer Ahmed نے فرمایا ہے۔۔۔

سر جی کمال ھی کرتے ھیں. رب ھو یا محبوب پھلی ترجیح بناءے بنا نھیں ملتا. ھم نے تو پھلی ترجیع ھی نھیں سیٹ کی کیسے کچھ حاصل کرین گے.

تبصرہ کیجیے